نامور لوک فنکار کرشن لال بھیل دیہانت کرگئے

سرائیکی، سندھی اور مارواڑی زبان کے نامور لوک فنکار کرشن لال بھیل مختصر علالت کے بعد بھیل نگر چولستان رحیم یارخان میں دیہانت کرگئے۔۔

صحرائے چولستان کی ایک اور منفرد آواز خاموش ہوگئی۔ معروف لوک گلوکار کرشن لال سیکڑوں مداحوں کو روتا چھوڑ گئے۔

انجہانی کرشن بھیل کا شمار ایسے لوک فنکاروں میں ہوتا تھا جنہوں نے اپنی انتھک محنت اور الگ انداز سے اپنا لوہا منوایا۔

کرشن لال بھیل نے اپنے فنی سفر کا آغاز 1987میں ریڈیو پاکستان بہاول پور سے کیا اور پھر پاکستان ٹیلیویژن پر بھی صلاحیتوں کا لوہا منوایا۔

کرشن بھیل نے سرائیکی، سندھی اور مارواڑی سمیت مختلف زبانوں میں گیت گائے۔ ان کے کئی آڈیو البم بھی ریلیز ہوئے۔

آنجہانی کرشن لال بھیل نے اپنے فن کے ذریعے دنیا بھر میں پاکستان کی نمائندگی کی۔ کرشن لال بھیل چند ماہ سے علیل تھے۔کرشن لال بھیل کو اپنے فن اور منفردانداز کی وجہ سے ہمیشہ یادرکھا جائے گا۔

دیگر خبریں

لوڈنگ ۔۔۔